Wednesday , January 17 2018
Home / Urdu Ghazal / Sun Saanson K Sultan Piya – Complete Ghazal

Sun Saanson K Sultan Piya – Complete Ghazal

سُن سانسوں کے سلطان پیا

Sun Saanson K Sultan Piya

سُن سانسوں کے سلطان پیا
ترے ہاتھ میں میری جان پیا
میں تیرے بن ویران پیا
تو میرا کُل جہان پیا
مری ہستی، مان، سمان بھی تو
مرا زھد، ذکر، وجدان بھی تو
مرا، کعبہ، تھل، مکران بھی تو
میرے سپنوں کا سلطان بھی تو
کبھی تیر ہوئی، تلوار ہوئی
ترے ہجر میں آ بیمار ہوئی
کب میں تیری سردار ہوئی
میں ضبط کی چیخ پکار ہوئی
مرا لوں لوں تجھے بلائے وے
مری جان وچھوڑا کھائے وے
ترا ہجر بڑا بے درد سجن
مری جان پہ بن بن آئے وے
مری ساری سکھیاں روٹھ گئیں
مری رو رو اکھیاں پھوٹ گئیں
تجھے ڈھونڈ تھکی نگری نگری
اب ساری آسیں ٹوٹ گئیں
کبھی میری عرضی مان پیا
میں چپ، گم صم، سنسان پیا
میں ازلوں سے نادان پیا
تو میرا کُل جہاں پیا

*****************
مری تھم تھم جاوے سانس پیا
مری آنکھ کو ساون راس پیا
تجھے سن سن دل میں ہوک اٹھے
ترا لہجہ بہت اداس پیا
ترے پیر کی خاک بنا ڈالوں
مرے تن پر جتنا ماس پیا
تُو ظاہر بھی، تُو باطن بھی
ترا ہر جانب احساس پیا
تری نگری کتنی دور سجن
مری جندڑی بہت اداس پیا
میں چاکر تیری ازلوں سے
تُو افضل، خاص الخاص پیا
مجھے سارے درد قبول سجن

مجھے تیری ہستی راس پیا

*****************

مِرا چین پیا، مرِی جان پیا
مِری جندڑی کا سلطان پیا
تِرے باہج حرام ہے جگ سارا
مجھے قسم رسول، قرآن پیا
تری راہ تکتے ہیں نین مرے
کبھی دل کا بن مہمان پیا
مِرا ہیرا، لوء لوء، موتی تُو
یاقوت مِرا، مرجان پیا
مِرا تیور تُو، مِرا کومل تُو
مِرا بھیرو، شُد کلیان پیا
مِرا نَحنُ اَقرَب بس اِک تُو
مِرا کعبہ، تھَل، مکران پیا
مِرا زینؔ بھی تُو، مِرا مان بھی تُو
مرا زُھد، ذکر، وجدان پِیا

*****************
مرے پیروں میں زنجیر پِیا
اب نین بہاویں نیر پِیا
اے شاہ مرے اک بار تو آ
تو وارث، میں جاگیر پِیا
تم سپنوں کی تعبیر پِیا
بے نام ہوئی، گم نام ہوئی
کیوں چاہت کا انجام ہوئی
مرا مان رہے، مجھے نام ملے
اک بار کرو تحریر پِیا
تم سپنوں کی تعبیر پِیا
کب زلف کے گنجل سلجھیں گے
کب نیناں تم سے الجھیں گے
کب تم ساون میں آؤ گے
کب بدلے گی تقدیر پِیا
تم سپنوں کی تعبیر پِیا
سب تیر جگر کے پار گئے
مجھے سیدے کھیڑے مار گئے
آ رانجھے آ کر تھام مجھے
تری گھائل ہو گئی ہیر پِیا
تم سپنوں کی تعبیر پِیا
میں جل جل ہجر میں راکھ ہوئی
میں کندن ہو کر خاک ہوئی
اب درشن دو، آزاد کرو
اب معاف کرو تقصیر پِیا
تم سپنوں کی تعبیر پیا
کب زین اداسی بولے گی
کب بھید تمہارا کھولے گی
کب دیپ بجھیں ان آنکھوں کے
تم مت کرنا تاخیر پِیا
تم سپنوں کی تعبیر پِیا

*****************
یہ کیسی تیری پریت پیا
تو دھڑکن کا سنگیت پیا
ترے رسم رواج عجیب بہت
مرا در در پھرے نصیب بہت
ترا ہجر جو مجھ میں آن بسا
میں تیرے ہوئی قریب بہت
مجھے ایسے لگ گئے روگ بُرے
میں جان گئی سب جوگ بُرے
آ سانول نگری پار چلیں
اس نگری کے سب لوگ بُرے
تجھے دیکھ لیا جب خواب اندر
میں آن پھنسی گرداب اندر
بن پگلی، جھلَی، دیوانی
میں ڈھونڈوں تجھے سراب اندر
ترے جب سے ہو گئے نین جدا
مرے دل سے ہو گیا چین جدا
کیا ایک بدن میں دو روحیں
ہم جسموں کے مابین جدا
یہ ہے ازلوں سے رِیت پیا
کب مل پائے من میت پیا
اب لوٹ آؤ سُونے مَن میں
کہیں وقت نہ جائے بیت پیا
یہ کیسی تیری پریت پیا
تو دھڑکن کا سنگیت پیا

*****************
تری یاد میں کاٹوں رین پیا
گئی نیند، گیا سکھ چین پیا

تری ایک جھلک تک لینے کو
مرے ترس گئے دو نین پیا

میں خواب نگر کے پار گئی
اک بار نہیں ہر بار گئی
میں رو رو جیون ہار گئی
مجھے تیری جدائی مار گئی
ہر سمت خموشی طاری ہے
اور ہجر بھی ہر سو جاری ہے
ہر رات ترے بن بھاری ہے
اب جندڑی تجھ پر واری ہے
مجھے درد ملے انمول پیا
میں ہستی بیٹھی رول پیا

کبھی میرے دکھ سکھ پھول پیا
تُو میرا سانول ڈھول پیا

*****************

تو میرا سانول ڈھول پیا
کبھی بول تو مِٹھڑے بول پیا
ذرا دھیرے سے لب کھول پیا
یوں مول نہ کر مت تول پیا
مِری جندڑی کو مت رول پیا
یوں کانوں میں رَس گھول پیا
تو میرا سانول ڈھول پیا
کبھی بول تو مِٹھڑے بول پیا
کبھی آنکھیں ساون بھادوں ہیں
کبھی سانسوں میں ویرانی ہے
’’میں لوٹ کہ پھر نہیں آؤں گا‘‘
تو ایسے تو مت بول پِیا
تو میرا سانول ڈھول پیا
کبھی بول تو مِٹھڑے بول پیا
ہمیں پیار کرو، بیمار کرو
جو جی میں آئے یار کرو
احسان یہ اب کی بار کرو
تبدیل کرو ماحول پیا
تو میرا سانول ڈھول پیا
کبھی بول تو مِٹھڑے بول پیا
کوئی سچ نہ تمہارا مانے گا
اپنا نہ کوئی پہچانے گا
کوئی تولے گا کوئی چھانے گا
تو جو جی چاہے بول پیا
تو میرا سانول ڈھول پیا
کبھی بول تو مِٹھڑے بول پیا
کیوں آس لگاتے رہتے ہو
کیوں پیاس جگاتے رہتے ہو
کبھی ہم بھی دیکھیں روپ تِرا
کبھی بند دروازے کھول پیا
تو میرا سانول ڈھول پیا
کبھی بول تو مِٹھڑے بول پیا
زینؔ اُس کی باتیں کرتے ہو
کیوں ٹھنڈی آہیں بھرتے ہو
نہ جیتے ہو نہ مرتے ہو
مت بند اشکوں کے کھول پیا
تو میرا سانول ڈھول پیا
کبھی بول تو مِٹھڑے بول پیا

About admin

Check Also

Mujh Kamli Ka Singhaar Piya

مجھ کملی کا سنگھار پیا ان سانسوں کا سردار پیا تجھ بن در، چھت، دیوار …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *